ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Tere janay se chalo ye to howa

Tere janay se chalo ye to howa-judai ghazal shayari

کوئی منزل نہ کچھ سبیل ہوئی
راہ اندھی ہوئی طویل ہوئی

ساری دنیا ہی ہو گئی منصف 
کیا محبت مری وکیل ہوئی

چاہئے تو کہ تجھ پہ مرتے ہیں 
سوچئے یہ کوئی دلیل ہوئی

تیرے جانے سے چلو یہ تو ہوا
مختصر زندگی طویل ہوئی

ہم کو راس آ گئی محبت اک
خلق یہ سو طرح ذلیل ہوئی

ہے غنیمت کے ساتھ سایہ ہے
چلو اک شے یہاں اصیل ہوئی

کیا جو مر جائیں گے تب آؤ گے 
یہ بھی ابرک کوئی سبیل ہوئی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک