ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

mai hon tera mera wajood hai tu

mai hon tera mera wajood hai tu

مختصر بات، بات کافی ہے
اک ترا ساتھ، ساتھ کافی ہے

جو گزر جائے تیرے پہلو میں
ہم کو اتنی حیات کافی ہے

میں ہوں تیرا، مرا وجود ہے تُو
کُل یہی کائنات کافی ہے

لاکھ کیجے مگر محبت میں
کب کوئی احتیاط کافی ہے

ہمیں ہم سے کیا ہے پھر ہم تم
یہ جہاں بے ثبات کافی ہے

اب نہیں کوئی جیتنے میں نشہ
تم سے پائی جو مات کافی ہے

کر لی اونچی فصیلِ دل ہم نے
ایک ہی واردات کافی ہے

ابھی سے شکوہ ہے اندھیروں کا
ابھی ابرک یہ رات کافی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک