ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

KUSH B KER LIJIYE MAGAR BANDHA

KUSH B KER LIJIYE MAGAR BANDHA

اک اُسی کو دھیاں نہیں ہوتا
جس کے بن یہ جہاں نہیں ہوتا

اس محبت میں یہ خرابی ہے
جو جہاں ہے وہاں نہیں ہوتا

ڈھونڈھئے گا کہاں کہاں اس کو
جانے والا کہاں نہیں ہوتا

آگ ایسی کہ راکھ راکھ بدن
ظرف اتنا ، دھواں نہیں ہوتا

جانے کیا بھیڑ ہے مرے اندر
لہو تک اب رواں نہیں ہوتا

کچھ بھی کر لیجئے مگر بندہ 
آپ سے بد گماں نہیں ہوتا

صرف ہم تب تلک نبھائیں گے
جاں کا جب تک زیاں نہیں ہوتا

در و دیوار سے لپٹتے ہیں
جب کوئی راز داں نہیں ہوتا

تم پہ گزری ہے تم کہو ابرک
ہم سے آگے بیاں نہیں ہوتا

…………………….. اتباف ابرک