ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

hum ko tere siwa duniya ki

hum ko tere siwa duniya ki

میر کی ہم کو غزل لگتا ہے
چاند تارو‍ں کا بدل لگتا ہے

میں کہ انبار مصائب کا ہوں
ہر مصیبت کا تو حل لگتا ہے

ہم کو اک تیرے سوا دنیا کی
باقی ہر شے میں خلل لگتا ہے

تو ہی تو عمرِ رواں ہے میری
اور سب گزرا سا کل لگتا ہے

ہم کو ابرک ہے وہ ایسے، جیسے
کسی مچھلی کو یہ جل لگتا ہے

…………….. اتباف ابرک