ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Tu na samjhay ga ic muhabbat ko

Tu na samjhay ga ic muhabbat ko

معجزہ بار بار تھوڑی ہے
زندگی کوئے یار تھوڑی ہے

شور ہے، آپ کان مت دھرنا
آہ میری ، پکار تھوڑی ہے

جن کے بچھڑے سے لوگ مرتے ہیں
ان میں اپنا شمار تھوڑی ہے

میں بلاؤں، وہ لوٹ آئے گا
خود پہ یہ اعتبار تھوڑی ہے

جب ضرورت ہو تم چلے آنا
دل کے باہر قطار تھوڑی ہے

عمر بھر کی مری کمائی ہے
درد ملتا ادھار تھوڑی ہے

تو نہ سمجھے گا اس محبت کو
سر پہ تیرے سوار تھوڑی ہے

تھوڑی تھوڑی ہے وحشتِ دل بھی
سب تمہارا خمار تھوڑی ہے

زخم دنیا بھی ہے ہرے رکھتی
تم پہ دار و مدار تھوڑی ہے

لوٹ آیا ہے دشت سے مجنوں
وہ بھلا ہم سا خوار تھوڑی ہے

گل اگر دیکھ لے نظر بھر کے
پھر کوئی خار خار تھوڑی ہے

حال میرا جو پوچھ لیتے ہیں
بس مروت ہے پیار تھوڑی ہے

بیچ نفرت گھسیٹ لائے ہو
کیا محبت کی مار تھوڑی ہے

یونہی جلدی نہ کر تو مرنے کی
واں ترا انتظار تھوڑی ہے

غلطی کرتا ہوں کیونکہ انساں ہوں
مجھ پہ سب آشکار تھوڑی ہے

تم کو ابرک کی کیا صفائی دوں
داغ ہے ، داغ دار تھوڑی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک