ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Ic say pahly k chor jaon tujhay

Ic say pahly kay chor jaon tujhay-urdu poetry in urdu

اس سے پہلے کہ چھوڑ جاؤں تجھے
زیست آ پھر سے آزماؤں تجھے

تیری عادت ہے زخم دینے کی
میری خواہش ہے مسکراؤں تجھے

موسمِ گل کو مات دینی ہے
آ خزاؤں میں پھر ملاؤں تجھے

جب تلک رخ ہوا نہیں بدلے
تب تلک اے دیے جلاؤں تجھے

میرا قصہ نہیں ہے لفظوں میں 
مجھ سے آنکھیں ملا، سناؤں تجھے

آؤ اک ایسی بازی کھیلیں اب
جیت جاؤں یا ہار جاؤں تجھے

آخری حکم اب کرو صادر
بھولنا ہے کہ یاد آؤں تجھے

روٹھ جاتا ہے یہ جہاں سارا
میرے ابرک اگر مناؤں تجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک