ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

lazam hami pe q hai

lazam hami pe q hai- romantic urdu poetry

رستوں سے کیا گلہ ہے جو منزل یہاں نہیں 
جس پار تھا اترنا وہ ساحل یہاں نہیں 

مانا وہی ہے شہر، وہی بھیڑ بھاڑ ہے
جس کو مری تلاش وہ محفل یہاں نہیں

لازم ہمی پہ کیوں ہے، ہر اک خواب دیکھنا
کیوں ہم کسی کے خواب کا حاصل یہاں نہیں

ممکن کہاں ہے اور کی اب جستجو کروں 
جب اک نظر کے بھی کوئی قابل یہاں نہیں 

تم اور تمہارے بعد یہ آسانیاں ہوئیں 
اب اور کوئی بھی ہمیں مشکل یہاں نہیں

کیسے کہوں یہ جھوٹ کہ سینے میں دل نہیں 
یہ بھی ہے سچ وہ پہلی سی ہلچل یہاں نہیں 

نیندوں کو ہم سے بچھڑے زمانے گزر گئے
یادوں سے آج کہنا وہ غافل یہاں نہیں

جو بھی یہاں پہ نکلا محبت کو بانٹنے 
دریا میں پھینک آیا کہ سائل یہاں نہیں 

ابرک، اٹھو، چلو کہیں دیتے ہیں اور جاں
تو جس کو ڈھونڈتا ہے وہ قاتل یہاں نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک