ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Yahi tu chaha tha bus saans tuk rasaai ho

Yahi tu chaha tha bus saans tuk rasaai ho

قصور کوئی زمانے، سماج کا کب تھا
یہ بدنصیب ہی تیرے مزاج کا کب تھا

تو خود ہی سوچ مخالف ہوا نہ کیسے ہو
کہ میرا ایک عمل بھی رواج کا کب تھا

یہی تو چاہا تھا بس سانس تک رسائی ہو
سوال میرا کسی تخت و تاج کا کب تھا

گئے دنوں کو میں سر پر اٹھائے پھرتا ہوں
تمہارے بعد کسی کام کاج کا کب تھا

مرض سے کیسے کیا جائے اب گلہ کوئی
ذرا سا شوق یہاں بھی علاج کا کب تھا

شبِ فراق کو ہر سحر ہنس کے کہتی ہے
اسے بتاو کہ وعدہ ہی آج کا کب تھا

مرے یہ شعر قلم بد گماں لکھے ابرک
خیال دل کو کسی احتجاج کا کب تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک