ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

tere ghum ko ager samjh paye

tere ghum ko ager samjh paye

تجھ سا سوچیں یا تجھ سا نم لکھیں
گر یہ سوچیں کبھی نہ ہم لکھیں

تیرے غم کو اگر سمجھ پائیں
اپنے غم کو کبھی نہ غم لکھیں

ہم نے سیکھا ہے جھوٹ یہ تم سے
قہقہوں سے غم و الم لکھیں

سانس جو موت بن کے آتی ہے
آپ کا دم ہے اس کو دم لکھیں

آخری ہے تو پھر محبت ہے
ورنہ اس کو فقط ستم لکھیں

جس گھڑی ہم نے تم کو دیکھا تھا
اس گھڑی کو مرا جنم لکھیں

زندگی کٹ نہیں رہی تم بن
لکھنے والے تو دو قدم لکھیں

کتنے گستاخ ہو گئے ابرک
ایلیا کو ہی ہم قلم لکھیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک