ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

khud mai shamal hon

khud mai shamal hon-sad poetry sms

تجھ کو جب یاد نہیں رہتا میں
کیسے برباد نہیں رہتا میں

رونقیں ہیں جہاں کی جوبن پر
ایک آباد نہیں رہتا میں

نہ قفس کوئی نہ صیاد ہے اب 
کیوں پھر آزاد نہیں رہتا میں

کہہ دیا دل نے ترے بعد ہمیں 
جاؤ اب شاد نہیں رہتا میں

سب جو نالاں ہیں تو الزام ہے کیا
بن کے فریاد نہیں رہتا میں

مے کشوں میں نہیں ہے نام مگر
شام کے بعد نہیں رہتا میں

خود میں شامل ہوں انہی لوگوں میں 
جن کو اب یاد نہیں رہتا میں

داستاں کاش تری بن جاتا
اپنی روداد نہیں رہتا میں

آج لکھا ہے تجھے جانِ غزل
آج بیداد نہیں رہتا میں

نام لیتا وہ مرا بھی ابرک
صرف تعداد نہیں رہتا میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک