ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

barshon ki dosti pakkay makan walon se hai

barshon ki dosti pakkay makan walon se hai-pakistani urdu ghazal

بارشوں کی دوستی پکے مکاں والوں سے ہے
اور عداوت جو بھی ہے کچے مکاں والوں سے ہے

شدتِ طوفاں ہے کیا، ہو کب محل کو یہ خبر
سو ہمیں امید بس ڈوبے مکاں والوں سے ہے

کاہے گھبراتا ہے تو، تیرا جہاں کچھ اور ہے
زندگی کی جنگ تو ٹوٹے مکاں والوں سے ہے

بھول جاتا ہے خدا آسانیوں کی بھیڑ میں
ہم نے یہ سیکھا سبق اونچے مکاں والوں سے ہے

فکر سے آزاد نیندوں کو بھلا اب کیا پتا
رات کا سارا حسن، جاگے مکاں والوں سے ہے

جاگتے میں جب ترے ہے لٹ گیا تیرا مکاں
تجھ کو پھر کیسا گلہ سوئے مکاں والوں سے ہے

جن گھروں کی چوکھٹوں سے خواب لوٹیں ٹوٹ کر
وقت بھی تو مہرباں ایسے مکاں والوں سے ہے

یہ جہاں اہلِ جہاں کا مشترک ہے اک مکاں
اور ناخوش ہر نفس اپنے مکاں والوں سے ہے

جس کو سمجھے شاعری ابرک ترے غمخوار سب
گفتگو تیری ، ترے ، روٹھے مکاں والوں سے ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک