ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Hai msalsal mere ser dhop

سب کے حصے میں کئی بار ہے بٹ کر دیکھا
کچھ نہ حاصل ہوا منظر سے بھی ہٹ کر دیکھا

دور بیکار سا مبہم سا نظر آتا ہوں 
کتنا آئینوں سے ہم نے تو چمٹ کر دیکھا 

ہے مسلسل مرے سر دھوپ کسی صحرا سی
لاکھ دیواروں کے سائے سے لپٹ کر دیکھا

فرق ہونے سے نہ ہونے سے مرے کچھ بھی نہیں
بار ہا ہم نے کہانی میں سمٹ کر دیکھا

کتنی حسرت تھی کے انجام بدل جائے گا
ورق آخر کا کئی بار پلٹ کر دیکھا

پھر یہی ہوتا ہے رہ جاتے ہیں تنہا ہم ہی 
وقت کے ساز کو، ہر لے کو الٹ کر دیکھا

جتنی شدت سے مرے خواب کو توڑا ہے گیا
اُتنی شدت سے وہی خواب ہے ڈٹ کر دیکھا

جو پرکھ سکتی ہمیں، آنکھ میسر نہ ہوئی
اپنی قیمت سے بھی ابرک نے تو گھٹ کر دیکھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک