ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

ilawa mere her ek shakhs noor niklay ga

ilawa mere her ek shakhs noor niklay ga

علاوہ میرے ہر اک شخص نور نکلے گا
میں جانتا ہوں مرا ہی قصور نکلے گا

یہ خوب ہم سے زمانے نے ضد لگائی ہے
ہوا نہ میرا جو اس کا ضرور نکلے گا

خبر مجھے تھی یہ رستہ نہیں ہے منزل کا
گمان کب تھا کہ خود سے بھی دور نکلے گا

ہے رہزنوں سے رعایت یہ خاص منصف کی
کہ قافلوں کا ہی لٹ کر قصور نکلے گا

اسی امید پہ اب اور کتنی عمریں جیوں
کہ جینا لازماً اک دن سرور نکلے گا

علاج ڈھونڈا تو ڈھونڈا عجب طبیبوں نے
یہ جان نکلے تو دل کا فتور نکلے گا

ہزار بدلو مگر آئینوں کے بس میں نہیں
یہ عکس میرا یونہی چُور چُور نکلے گا

نشہ ہے عارضی ابرک یہ چاہے جانے کا
تمہارے دل سے بھی جلدی غرور نکلے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک