ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

HAMAIN MALOOM HAI SARI HAQEEQAT

HAMAIN MALOOM HAI SARI HAQEEQAT

زمیں پر درد کا سایہ ہوا ہے
ہر اک چہرہ ہی گہنایا ہوا ہے

بتا کر نام ہم کو زندگی کا
گلے میں طوق پہنایا ہوا ہے

سمجھ لیجے کہ ہم کو زندگی نے
یہاں زندہ ہی دفنایا ہوا ہے

نہیں تھی چاہ جب تو میزباں کیوں
ہمیں مہمان بلوایا ہوا ہے

ہمیں معلوم ہے ساری حقیقت 
مگر یہ دل کہ بس آیا ہوا ہے

نیا کچھ کب ہمارے واسطے ہے
ہر اک دھوکہ یہاں کھایا ہوا ہے

ہے عالم جاں کنی کا دنیا داری 
کہ ہر اک شخص اکتایا ہوا ہے

کہاں مانے گا تیری بات یہ دل
کہ اک کافر کا منوایا ہوا ہے

یہ کیا سوغات ہے ابرک محبت
جسے دیکھو وہ ترسایا ہوا ہے

…………………………… اتباف ابرک