ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Bus ek mor mur geya tha gulat

Bus ek mor mur geya tha gulat

منزلوں سے بھی ہوں گزر آیا
جا رہا تھا کدھر ، کدھر آیا

ایک بس موڑ مڑ گیا تھا غلط
پھر نہ رستہ ملا نہ گھر آیا

سب کی راہوں میں منزلیں آئیں
میرے حصے فقط سفر آیا

کوئی طوفاں، وبا، عذاب اترا
سب سے پہلے وہ میرے در آیا

بڑے خوش بخت ہیں اندھیرے یہ
دیا ہی بعد از سحر آیا

تجھے اپنا ہی تھا سمجھ بیٹھے
خود میں ہم کو تھا کیا نظر آیا

ہم نے دل کھول کر وفا کی تھی
تازہ تازہ تھا یہ ہنر آیا

زندگی اک طویل قصہ ہے
دل یہ آغاز میں ہی بھر آیا

سوچا مر کے سکون پائیں گے
اک نیا درد سر نظر آیا

اک محبت بھلانے کو ابرک
اک محبت نئی ہوں کر آیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک