ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

chahay koi b dil tatu lu tum

chahay koi b dil tatu lu tum

میں تو ہوں صرف قصہ خواں اس میں
دنیا تیری ہے داستاں اس میں

چاہے کوئی بھی دل ٹٹولو تم
کوئی رہتا ہے نیم جاں اس میں

کٹ رہا ہے شجر شجر یہ چمن
کیسے غافل ہیں باغباں اس میں

کبھی محفل تھی غم گساروں کی
آج رہتے ہیں بدگماں اس میں

خود جہاں دے گا آندھیوں کو خبر
تم بناو تو آشیاں اس میں

ہر تعلق ہے ناو کاغذ کی
اور محبت ہے بادباں اس میں

گھر بناو تو احتیاط کرو
رہ نہ جائے فقط مکاں اس میں

تھے فسانے کی آنکھ میں آنسو
ذکر آیا مرا جہاں اس میں

مل گئی تو گزار لی ہم نے
جیا جاتا ہے اب کہاں اس میں

ہم نے تو بارہا کہی دل کی
پر کسی کا نہیں دھیاں اس میں

یوں تو ساکت ہے زندگی میری
درد رکھا گیا رواں اس میں

شکوہ ہے تو حیات سے اتنا
جا رہا ہوں میں رائیگاں اس میں

یہ زمانہ ہے آئینہ ، ابرک
ڈھونڈتا کیا ہے خوبیاں اس میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک