ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Arza hai ajeeb ye dil ka

Arza hai ajeeb ye dil ka- urdu sad ghazals

زیست کا بھی ادب نہیں ہوتا
آپ اپنا میں اب نہیں ہوتا

عارضہ ہے عجیب یہ دل کا
جب تو ہوتا ہے تب نہیں ہوتا

یاد آتے ہیں غم میں اپنے سب
غم بھی لیکن یہ کب نہیں ہوتا

بھول بیٹھا ہوں دنیا داری کو
یہ دکھاوا بھی اب نہیں ہوتا

خوب ہنستا ہے تھک کے دیوانہ
رونا دھونا ہی اب نہیں ہوتا

اس نے آنے کی شرط رکھی ہے
اور میں جاں بہ لب نہیں ہوتا

سرد راتیں، وہ نیند، خواب ترے
ہم سے اب یہ بھی سب نہیں ہوتا

نیند جائے تو خواب ناں ٹوٹے
ہائے، ایسا غضب نہیں ہوتا

ہم پہ ہوتے ہیں فیصلے نافذ
اب یہ مجرم طلب نہیں ہوتا

سب ہیں عالی جناب، قد آور
بس ہمارا نسب نہیں ہوتا 

جو دکھاتا تھا راہ منزل کی 
وہ ستارا بھی اب نہیں ہوتا

لفظ تقدیر علم ہے رب کا
کچھ یہاں بے سبب نہیں ہوتا

جس کے ملنے کا ہو یقیں ابرک
اس کا کھونا عجب نہیں ہوتا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک