ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Zindagi tum nahi ho ab meri

Zindagi tum nahi ho ab meri

اس مکاں کا مکین کیسے ہو
کوئی تم سا حسین کیسے ہو

زندگی تم نہیں ہو اب میری
زندہ ہو کر یقین کیسے ہو

جو نہ لکھا خیال میں تیرے
شعر وہ دل نشین کیسے ہو

ہو طلب میں جو آسمانوں کی
اس کی پھر یہ زمین کیسے ہو

بن کے جیتا ہے اک سوال ابرک
کہاں ہو ہم نشین کیسے ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک