ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

baitti uski he gum gusari mai

betti uski he gum gusari mai-urdu poetry love

تم سے صرفِ نظر کیا ہم نے
دور خود سے سفر کیا ہم نے

جب سے نکلے ہیں تیری گلیوں سے
تیری یادوں کو گھر کیا ہم نے

منزلیں خود سے دور کرنے کو
راہ کو دربدر کیا ہم نے

نہ اثر ہے خزاں بہار کا اب
خود کو یوں بے خبر کیا ہم نے

کام آتا ہے بس محبت کا
وہی شام و سحر کیا ہم نے

فکر کس کو کہ کیا ہیں روگ اپنے
جب تمہی کو بسر کیا ہم نے

بیتی اس کی ہی غم گساری میں
جس کو بھی چارہ گر کیا ہم نے

سرِ محفل کہا ترا قصہ
خود کو یوں معتبر کیا ہم نے

وہ نہ سمجھے تو مسکرائے ہیں
شعر سمجھے، اثر کیا ہم نے

خود کہانی میں رہ نہ پائے ہم 
قصہ جب مختصر کیا ہم نے

کوئی بتلائے گا ہمیں ابرک
بھلا کیا عمر بھر کیا ہم نے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک