ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

ankh tum ko hi na jub paye gi

ankh tum ko hi na jub paye gi

آنکھ تم کو ہی جب نہ پائے گی
عید کیسے منائی جائے گی

چاند کافی نہیں ہے میرے لئے
تیرے آنے پہ عید آئے گی

زندگی لاکھ توڑ لے مجھ کو
تو نہ امید توڑ پائے گی

غم نے ہنسنا ہنسانا سیکھ لیا
اب اداسی بھی مسکرائے گی

جو نہ رویا کبھی جدائی میں
اسے کیا بات اب رلائے گی

بھول سکتا ہوں سال بھر تجھ کو
عید پر عید ہے ستائے گی

زندگی کا ہے یہ چلن ابرک
آزماتی ہے، آزمائے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک