ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

abi se num dher-o-diwar hain ye

abi se num dher-o-diwar hain ye

دلیلوں سے جہاں ہر بات ہو گی
وہاں اس دل کی کیا اوقات ہو گی

کوئی اس دل سے اب پردہ اٹھا دے
وگرنہ طے ہے ہم کو مات ہو گی

مری آنکھوں میں رکھ دو لاکھ سورج
مرے اندر اندھیرا، رات ہو گی

سراسر زندگی نکلی مشقت
ہمارا وہم تھا سوغات ہو گی

ابھی سے نم در و دیوار ہیں یہ
تو کیا گزرے گی جب برسات ہو گی

چلے گا چال جب جب یہ زمانہ
نتیجہ طے ہے ہم کو مات ہو گی

جہاں ہر سوچ دل کے ہو گی تابع
وہاں ابرک تری کب بات ہو گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک