ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

ye b likha geya qasoor mera

ye b likha geya qasoor mera

عمر اس راہ پر فنا کی ہے
جس کے ہر موڑ نے دغا کی ہے

یاد کر کر کے تلخ باتوں کو
زندگی خود سے بے مزا کی ہے

ایک تو لوگ نا قدر سارے
اور اک ہم کہ بس وفا کی ہے

پوچھنا حال دنیا داری ہے
کس نے کس کی یہاں دوا کی ہے

اور تو اور خود سے نالاں ہوں
ہر تعلق میں ہی خطا کی ہے

مجھ سے ملنے کو تم نہ آیا کرو
آئینے تک نے التجا کی ہے

یہ بھی لکھا گیا قصور مرا
کہ محبت میں انتہا کی ہے

جاں قفس میں ہے اپنی مرضی سے
قید سے کب کی یہ رہا کی ہے

کیا دعا کرتے جب یقیں ہی نہیں
یہ دعا کی یا بد دعا کی ہے

جس سے کرنا کنارہ تھا ابرک
تم نے ہر شے وہ آشنا کی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک