ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Hum kaha k hain kozah ghr Akbar

Hum kaha k hain kozah ghr Akbar-judai ghazal shayari

کیوں مرض لا دوا نہیں بنتا
میری جب تو دوا نہیں بنتا

سب کو اپنا بنا کے دیکھ لیا
کوئی اپنا سدا نہیں بنتا

فاصلے وقت یوِں سجاتا ہے
تا ابد راستہ نہیں بنتا

میں نبھاتا ہوں ہر تعلق کو
جب تلک وہ سزا نہیں بنتا

ان کو بھاتا نہیں پرانا کچھ
اور میں بھی نیا نہیں بنتا

خود سے جس کو نظر نہیں آتا
اس سے کچھ پوچھنا نہیں بنتا

لوگ پیچھا ترا نہ چھوڑیں گے
جب تلک تو برا نہیں بنتا

لکھ دیا ہم نے بے وفا خود کو 
جب کوئی با وفا نہیں بنتا

جو ہوں جیسا ہوں، اب قبول کرو
جھوٹ میں پارسا نہیں بنتا

جیسے سائے کو روشنی لازم
میں بھی تیرے سوا نہیں بنتا

اُس ہنر سے ہمیں بغاوت ہے
جو کبھی انتہا نہیں بنتا

ہم کہاں کے ہیں کوزہ گر ابرک
ہم سے جب آپ سا نہیں بنتا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک