ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

hum b meshor howay bad tere

hum b meshor howay bad tere

اس محبت کے کرم سے پہلے
خود کو جیتا تھا میں تم سے پہلے

حسرت و یاس و الم سے پہلے
دل یہ مغرور تھا غم سے پہلے

چوٹ لازم ہے شفا یابی کو
کون سمجھا ہے ستم سے پہلے

تم کو جانا تو ہم نے جانا
تم بھی پتھر ہو صنم سے پہلے

جانے والوں کو بھلا روکئے کیا
دل یہ اٹھتے ہیں قدم سے پہلے

ہم بھی مشہور ہوئے بعد ترے
تم بھی گمنام تھے ہم سے پہلے

میری باتوں میں ہے تاثیر کہ میں
دل پہ لکھتا ہوں قلم سے پہلے

دیکھ بیٹھا ہوں زمانہ ابرک
کوئی ہم سا تھا نہ ہم سے پہلے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک