ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Jii raha hon mager yahi such hai

Jii raha hon mager yahi such hai

جب سے ہم پر نگاہِ ناز نہیں
سُر میں دنیا کا کوئی ساز نہیں

اپنے کہنے میں ساری دنیا ہے
ایک بس تم سے ساز باز نہیں

بانٹتا کون ہے فقیروں میں
یہ محبت کوئی نیاز نہیں

اک زمانے کو ہے کرید مری
اور سوا تیرے کوئی راز نہیں

رفتہ رفتہ ہوا ہوں دنیا سا
آنکھ ہے خشک، دل گداز نہیں

آئینہ بھی ہے سر پھرا لیکن
ہم سا وہ بھی زباں دراز نہیں

جی رہا ہوں مگر یہی سچ ہے
جئے جانے کا اب جواز نہیں

خوب جھانسے میں سارا عالم ہے
کوئی ابرک سا پاک باز نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک