ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

KUSH NEYA DARD NEYA GHAO HO

atbaf abrak

پابہ زنجیر یا آزاد آئے
جو بھی آئے وہی ناشاد آئے

جس گلی سے ہو محبت کا گزر
کب وہاں سے کوئی دل شاد آئے

جان سے کم یہاں سودا نہ ہوا
تمہیں شکوہ ہے کہ برباد آئے

تم بسا بیٹھے ہو صحرا گھر میں
پھر نظر کیسے وہ آباد آئے

کچھ نیا درد , نیا گھاؤ ہو
کیوں ہر اک آہ پہ تم یاد آئے

بس اسی ڈر سے ہوں محفل میں تری
جانے کیا رنگ مرے بعد آئے

اب تو یہ بھی ہے گوارا ہم کو
تو نہیں تو ترا ہم زاد آئے

کوئی دن ایسا بھی آ جائے کبھی
لب پہ نالہ نہ ہی فریاد آئے

خواب یہ خواب ہوا جاتا ہے
ہم تری یاد سے دل شاد آئے

تم سے ابرک تھی امیدیں کتنی
تم بھی اوروں سے ہی بیداد آئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک