ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

Hawa k dhosh per ab tuk dhahai deti hai

Hawa k dhosh per ab tuk dhahai deti hai

ہوا کے دوش پر اب تک دہائی دیتی ہیں
پرانی دستکیں اب تک سنائی دیتی ہیں

قفس کو توڑنے کی جستجو میں گزری ہے 
وہ بیتی گھڑیاں مگر کب رہائی دیتی ہیں

نکل تو سکتا ہوں اسکی گلی سے میں لیکن
وہاں سے آگے نہ راہیں سجھائی دیتی ہیں

تو کیسے مانوں دلیلیں میں عقل کی سوچو
کسی کی یادیں جو پل پل صفائی دیتی ہیں

اس انتظار کو جب جب سمیٹا ہے ہم نے
بدن سے سسکیاں، آہیں سنائی دیتی ہیں

کسی کہانی کا کردار سوچ کر بنئے
حسیں کہانیاں اک دن جدائی دیتی ہیں

ہے بات بات میں منظر کشی اندھیروں کی
تمہاری آنکھیں تو روشن دکھائی دیتی ہیں

شکر گزار ہے ابرک ہجر کی راتوں کا
مرے وجود کو مجھ تک رسائی دیتی ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک