ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

meri katiyan tabakti hain

meri katiyan tabakti hain

وہی قصہ پرانا ہے
تو کیا لکھنا لکھانا ہے

مری کٹیا ٹپکتی ہے
ترا موسم سہانا ہے

یہاں آنسو برستے ہیں
وہاں ہنسنا ہنسانا ہے

کرم کر آسماں والے
کہاں تک آزمانا ہے

میں وہ کشتی ہوں کاغذ کی
جسے اب ڈوب جانا ہے

اتر جائے گا جب پانی
مجھے گھر یاد آنا ہے

اے بارش بے وفا ہو جا
کہ اب مشکل نبھانا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک