ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

pucha jo ek khayal ne ger lout aoun mai

pucha jo ek khayal ne ger lout aoun mai

کچھ یوں کرو کہ آئے وہ مہماں ابھی ابھی
یا یہ کرو کہ جائے مری جاں ابھی ابھی

جھیلا ہے تجھ کو زندگی کچھ اس یقین سے
ہونے لگی ہے جیسے تو آساں ابھی ابھی

پھر اس کی یاد آئی بجھانے کے واسطے
ہم نے کیا تھا دل میں چراغاں ابھی ابھی

جانے مرے فراق پہ کیوں خوش ہے یہ جہاں
دیکھا ہے ہم نے غم کو بھی رقصاں ابھی ابھی

زندان میں ہی خوش رہو ، آباد تم رہو
جاری ہوا ہے وقت کا فرماں ابھی ابھی

اب حال ہم سے اس کا بھلا پوچھتے ہو کیا
پہلو کو جس نے دیکھا ہے ویراں ابھی ابھی

پوچھا جو اک خیال نے گر لوٹ آوں میں
بے ساختہ جواب تھا جاناں ابھی ابھی

اس کو ڈرا رہا ہے خزاں سے بھلا تو کیا
گلشن جو کر کے بیٹھا، بیاباں ابھی ابھی

جس میں قصیدے اس کے، اسی کا بیان تھا
ابرک جلا دیا ہے وہ دیواں ابھی ابھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتباف ابرک