ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

MAI TERI RAH MAI EK UMER SE BAITHA SOCHON

MAI TERI RAH MAI EK UMER SE BAITHA SOCHON

سارے پردے گریں دیدار تلک پہنچوں میں
اے مقابل ترے کردار تلک پہنچوں میں

دنیا والے مجھے عزت کی نظر سے دیکھیں
کتنا گر جاوں کہ معیار تلک پہنچوں میں 

تب تلک سایہ بھی اس پار اتر جاتا ہے
جب تلک سایہِ دیوار تلک پہنچوں میں

بھوک اور ننگ تری کون بھلا سنتا ہے
یعنی مر جاؤں تو سرکار تلک پہنچوں میں

بے گناہی نہیں الزام ہی ثابت کر دو
کچھ نہیں اور چلو دار تلک پہنچوں میں

ہم کہ وہ جن سے کبھی مرضی نہ پوچھی جائے
اور خواہش ہے کہ انکار تلک پہنچوں میں

کیسے بے کار ہیں یہ گھات لگانے والے
جی میں آتا ہے کہ خود وار تلک پہنچوں میں

خوابِ غفلت کی وبا پھیلی ہے اس بستی میں
اب کسی ایک تو بیدار تلک پہنچوں میں

میں تری راہ میں اک عمر سے بیٹھا سوچوں
راہ کٹ جائے تو گھر بار تلک پہنچوں میں

تجھے سمجھاؤں گا پھر لکھتا ہے کیا کیا ابرک
پہلے خود آپ تو اشعار تلک پہنچوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک