ATBAF ABRAK

( افتاب اکبر )

MUHABBAT HI NAHI LAZAM

MUHABBAT HI NAHI LAZAM

(نظم)
محبت چھوڑ دو کرنا….
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

محبت ہی نہیں لازم 
نبھانا بھی ضروری ہے 
اگر ایسا نہیں ممکن
محبت چھوڑ دو کرنا 

محبت تب ہی تم کرنا 
کہ جب احساس شامل ہو 
اگر باتوں میں کرنی ہے 
محبت چھوڑ دو کرنا

محبت رنگ ہے ایسا 
نہ جو موسم کی سنتا ہے 
اگر دھوپوں سے ڈر جاؤ 
محبت چھوڑ دو کرنا

محبت ناؤ کاغذ کی 
جسے بس پار جانا ہے 
ہے گر طوفاں سے گھبرانا
محبت چھوڑ دو کرنا

محبت روگ وہ ظالم 
جو بڑھتا ہی چلا جائے 
اگر ممکن شفا ہو تو 
محبت چھوڑ دو کرنا

محبت ایسا رہبر ہے 
جو منزل روح کو دیتا 
اگر یہ جسم بھٹکائے
محبت چھوڑ دو کرنا 

…………………. اتباف ابرک